تازہ ترین
تجارتی

لڑتے ہوئے بات چیت کرنا چین امریکہ تجارتی مذاکرات کا معمول بن رہا ہے،سی آر آئی تبصرہ!

امریکی وزارت تجارت کے نمائندہ دفتر نے بدھ کے روز اعلان کیا ہے کہ امریکی حکومت دس تاریخ سے دو کھرب ڈالرز کی چینی مصنوعات پرعائد دس فیصد ٹیرف کو پچیس فیصد تک بڑھانے پرغور کر رہی ہے۔

اس کے جواب میں، چین نے کہا کہ تجارتی کشمکش میں اضافہ دو ملکوں کے عوام او دنیا کے عوام کے مفادات میں نہیں ہے جس پر چین کو بہت افسوس ہوتا ہے۔ اگر امریکہ نے مذکورہ اقدام پر عمل درآمد کیا تو چین اس کا فوری جواب دے گا۔ سی آر آئی کے تبصرہ نگار نے اپنے ایک مضمون میں کہا کہ شائد لڑتے ہوئے بات چیت کرنا چین امریکہ تجارتی مذاکرات کا معمول بن رہا ہے۔
یاد رہے کہ گزشتہ سال فروری کے بعد سے اب تک چین، امریکہ اقتصادی اور تجارتی مشاورت میں کچھ مثبت پیش رفت ہو ئی ہے، تاہم اس کے باوجود مسلسل کشمکش جاری ہے- اس دفعہ مذاکرات کے آغازسے قبل ہی امریکہ نے اچانک اضافی ٹیرف لگانے کا اعلان کیا ہے- جیسا کہ چینی وزارت خارجہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ ایسی صورت حال کئی بارپیش آچکی ہے۔ چین ایسے تماشےسے مانوس ہو گیا ہے اور پرسکون انداز میں اس کا سامنا کرتا ہے- چین حالات کے مطابق اقدام اٹھاتا ہے اور جوابی اقدامات اختیار کرتا ہے۔
اس پس منظر میں لوگ آسانی سے سمجھ سکتے ہیں کہ امریکہ کےمذکورہ اعلان کے باوجود چین کے نائب وزیراعظم اور چین، امریکی جامع اقتصادی ڈائیلاگ میں شریک چینی وفد کے سربراہ لیو حہ نو تا دس تاریخ واشنگٹن میں منعقد ہونے والی دو طرفہ تجارتی بات چیت شرکت کے لیے امریکہ جا رہےہیں- امریکی فیصلے کے برعکس چین یہ سمجھتا ہے کہ لڑتے ہوئے بات چیت کرنا چین امریکہ تجارتی مذاکرات کا معمول بن رہا ہے- اس لیے چین چھوٹی موٹی روکاٹوں اور شورسے متاثرنہیں ہوگا بلکہ دو طرفہ بات چیت کی صحیح سمت ثابت قدمی سے اپنا سفر جاری رکھے گا-

یہ خبر پڑھیئے

افغانستان میں امریکہ کی سیاہ تاریخ

افغانستان میں امریکہ کی سیاہ تاریخ

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons