جوہری صلاحیت میں ہم چین سے پیچھے رہ گئے، امریکی ایڈمرل کا اعتراف

یوکرین جنگ امریکا کے لیے مستقبل قریب میں بڑے ملٹری چیلنجز کا آغاز ہے، جوہری ہتھیاروں کی صلاحیتوں میں امریکا کی مسابقتی گرفت کمزور ہو رہی ہے۔

یہ بات امریکی اسٹریٹجک کمانڈ کے سربراہ ایڈمرل چارلس رچرڈ نے سالانہ نیول سب میرین لیگ سمپوزیم سے خطاب کے دوران کہی۔ ایڈمرل رچرڈ نے کہا کہ امریکا، روس اور چین کے خلاف جوہری برتری کھوتا جا رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر میں چین کے خلاف اپنی مزاحمتی استعداد کا جائزہ لوں تو یہ کہوں گا کہ ہم آہستہ آہستہ شکست کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چین اپنی صلاحیتوں کو بہت تیزی کے ساتھ میدانِ عمل میں اتار رہا ہے۔

ایڈمرل رچرڈ نے کہاکہ ہمارے حریف اپنی جوہری صلاحیتوں میں اضافہ کررہے ہیں، وہ دوسرے ممالک کا جوہری پروگرام ناقابل استعمال بنانے پر بھی کام کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ حریف ممالک غیر جوہری صلاحیتوں کو بھی بڑھا رہے ہیں جو اسٹریٹجک حملے کرنے میں استعمال ہوسکتی ہے۔ امریکی ایڈمرل نے کہا کہ حریف ملک جوہری ہتھیاروں پر اپنا انحصار کم نہیں کرنا چاہتے جبکہ امریکا اس بات پر توجہ دے رہا ہے کہ پرانے تنصیب شدہ سسٹمز کو وقت پر تبدیل کر دیا جائے کیونکہ ان کی سروس کی مدت ختم ہو رہی ہے۔

اسٹریٹجک کمانڈ کے سربراہ نے افواج کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ مسابقتی سبقت کے لیے ہمیں 1950 کی آپریشنل پالیسی سے سبق لینا چاہیے۔

یہ خبر پڑھیئے

چین اور عرب ممالک کے درمیان "بیلٹ اینڈ روڈ" تعاون میں نمایاں پیش رفت

چین اور عرب ممالک کے درمیان “بیلٹ اینڈ روڈ” تعاون میں نمایاں پیش رفت

چینی وزارت خارجہ کی ترجمان ماؤ نینگ نے 8 تاریخ کو  یومیہ پریس کانفرنس میں …

Show Buttons
Hide Buttons