چینی محققین  نے ایک اعلی قسم کا مصنوعی ریشم تیار کر لیا

چینی محققین نے  ایک اعلی قسم کا ریشم  تیار کرنے کا ایک نیا طریقہ دریافت کیا ہے، جو قدرتی ریشم  سے زیادہ   مضبوط  ہے۔

ریشم کے کیڑے کا ریشم بائیو میڈیسن میں بطور جراحی مواد اور ٹشو جنریشن ٹیسٹوں میں بھی بڑے پیمانے پر استعمال کیا جاتا ہے۔ ریشم مختلف خصوصیات کے منفرد امتزاج کے ساتھ پروٹین پر مبنی بائیو پولیمر یا ( ڈی این اے)  ہیں۔ مکڑی ڈریگ لائن سلک، جو مکڑی کے جالے کے بنیادی سہاروں کو بناتا ہے۔

سائنسدان  مکڑی  کے ڈی این اے کو ریشم  کے کیڑوں میں شامل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ مصنوعی طریقے   سے تیار کیا جانے والا ریشم  زیادہ مضبوط ہو۔ ایک سائنسی جریدے  journal Matter  میں شائع ہونے والی ایک نئی تحقیق میں  چین کی تھیان جن یونیورسٹی  کے محققین  نے ریشم  کے ان عام کیڑوں کا انتخاب کیا جو مصنوعی ریشم کی تیاری کیلئے آسانی سے دستیباب ہو سکیں۔ قدرتی ریشم کے کیڑے کا ریشہ ریشم کے گوند میں ڈھکے بنیادی ریشے سے بنا ہوتا ہے۔ محققین نے عام ریشم کے کیڑے سے ریشم کو ایک کیمیائی غسل میں ڈالا جو ریشم کے پروٹین کے انحطاط کو محدود کرتے ہوئے گلو کو تحلیل کر سکتا ہے۔

چین کے تھیان جن یونیورسٹی  کے محققین  کا کہنا ہے کہ  مصنوعی طریقے سے تیار کیا گیا ریشم مضبوطی کے اعتبار سے  ایک اعلی قسم کا ریشم تصور کیا جاتا ہے جبکہ مصنوعی طریقے سے تیار کردہ ریشم کی مضبوط مکڑی کے ریشم سے 70فیصد زائد ہوتی ہے۔ محققین کا کہنا ہے کہ مصنوعی طریقے سے تیار کردہ ریشم  غیر معمولی طاقت کو مصنوعی ریشوں میں بننے والے اعلی کرسٹل اور بہت چھوٹے  کرسٹلز سے منسوب کیا جا سکتا ہے۔ محققین کے مطابق، اسپننگ اور پوسٹ اسپننگ ڈرائنگ کے دوران فائبر میں زنک آئنوں کا شامل ہونا بھی اس کی بہترین میکانی خصوصیات میں حصہ ڈال سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مصنوعی طریقے سے ریشم کی تیاری کا طریقہ منافع بخش ہے اور  اس سے ایک اعلی قسم کا ریشم  حاصل کیا جا سکتا ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

چین اور عرب ممالک کے درمیان "بیلٹ اینڈ روڈ" تعاون میں نمایاں پیش رفت

چین اور عرب ممالک کے درمیان “بیلٹ اینڈ روڈ” تعاون میں نمایاں پیش رفت

چینی وزارت خارجہ کی ترجمان ماؤ نینگ نے 8 تاریخ کو  یومیہ پریس کانفرنس میں …

Show Buttons
Hide Buttons