تازہ ترین
چین کے 10 سے زائد شہر خودکار گاڑیوں کی آزمائشی تجارت کیلئے تیار

چین کے 10 سے زائد شہر خودکار گاڑیوں کی آزمائشی تجارت کیلئے تیار

چینی وزارت نقل و حمل کے سینئر عہدیدار نے اعلان کیا ہے کہ چین کے 10 سے زائد شہروں میں مخصوص علاقوں اور دورانیہ کیلئے خود کار گاڑیوں کی آزمائشی فروخت کی منظوری دیدی گئی ہے۔ ان گاڑیوں میں ٹیکسی اور بسیں شامل ہیں۔ وزارت کے محکمہ خدمات کے ڈپٹی ڈائریکٹر ہان چِنگ ھُوا کا کہنا ہے کہ مصنوعی ذہانت،فائیو جی اور بگ ڈیٹا جیسی جدید ٹیکنالوجیز کی تیز رفتار ترقی کی بدولت خود کار گاڑیوں کے استعمال کا رجحان فروغ پا رہا ہے۔

وزارت نقل و حمل نے رواں ماہ کے آغاز میں ٹیکسی کی خدمات کیلئے بغیر ڈرائیور کی گاڑیوں کے استعمال کی حوصلہ افزائی کیلئے راہنماء خطوط کے مسودے جاری کئے تھے جبکہ عوام سے 7 ستمبر تک رائے بھی طلب کی گئی ہے۔ ہان چِنگ ھُوا کے مطابق وزارت کو پہلے ہی ٹرانسپورٹ انڈسٹری، متعلقہ وزارتوں اور چند آٹو مینوفیکچررز کی جانب سے راہنماء خطوط کے جوابات موصول ہو چکے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ اس کھلی آن لائن مشاورت کا مقصد معاشرے کے تمام شعبوں سے مزید آراء اور تجاویز حاصل کرنا اور راہنماء خطوط پر نظر ثانی اور بہتری کیلئے مدد فراہم کرنا ہے۔

پریس کانفرنس کے دوران وزارت نے بجلی سے چلنے والی گاڑیوں کیلئے پاور گرڈ کی تعمیرات میں مزید بہتری کیلئے اقدامات بھی متعارف کروائے ہیں۔ملک بھر میں ہائی ویز کے ساتھ چارجنگ انفراسٹرکچر کا تعمیراتی عمل تیز کرنے کیلئے لائحہ عمل کا مسودہ تیار کرتے ہوئے وزارت قومی توانائی، اسٹیٹ گرڈ کارپوریشن آف چائنہ اور چائنہ سدرن پاور گرڈ کارپوریشن کے ساتھ مل کر ترقی کی حوصلہ افزائی کیلئے مختلف محکموں کی کوششوں کا بغور مطالعہ کرے گی۔ وزارت کے محکمہ برائے ہائی ویز کے ڈپٹی ڈائریکٹر چھن وان چیان کے مطابق بجلی سے چلنے والی گاڑیوں اور چارجنگ انفراسٹرکچر کی صلاحیت میں بہتری ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزارت 4 پہلوؤں سے معاون پالیسیاں پیش کرے گی، یعنی شاہراہوں کی عملی صورتحال کے مطابق مالی معاونت کی پالیسیوں کا اچھا استعمال، تعمیراتی عمل درآمد کے طریقہ کار میں بہتری، پاور گرڈز کی تعمیر میں تیزی اور چارجنگ سروس فیس کو معیاری بنانا۔

یہ خبر پڑھیئے

چین میں ای-کامرس کا جامع ترقی میں کردار: جانیئے تجزیہ کار کی زبانی

Show Buttons
Hide Buttons