پاکستان میں بنگلہ دیش کے ہائی کمشنر کی ایف پی سی سی آئی کے صدر عرفان اقبال شیخ سے ملاقات

پاکستان میں بنگلہ دیش کے ہائی کمشنر کی ایف پی سی سی آئی کے صدر عرفان اقبال شیخ سے ملاقات

پاکستان میں بنگلہ دیش کے ہائی کمشنر روح العالم صدیقی نے ایف پی سی سی آئی کے صدر عرفان اقبال شیخ اور چیئرمین کوآرڈینیشن مرزا عبدالرحمن سے ایف پی سی سی آئی کیپٹل آفس میں ملاقات کی۔

ملاقات میں باہمی تجارت اور دونوں ممالک کی کاروباری برادری کے مابین قریبی روابط کے فروغ، تعلقات میں بہتری سمیت مختلف شعبوں میں تعاون کرنے پر زور۔

اس موقع پر روح العالم صدیقی نے ایف پی سی سی آئی کے صدر عرفان اقبال شیخ اور چیئرمین کوآرڈینیشن مرزا عبدالرحمن سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ بنگلہ دیش پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو بہت اہمیت دیتا ہے اور دونوں ممالک کے درمیان گہرے تاریخی تعلقات ہیں۔

ہائی کمشنر نے کہا کہ تعمیراتی مواد، لائٹ انجینئرنگ، سرجیکل سامان، کھیلوں کے سامان، فوڈ پروسیسنگ، ڈینم کاٹن، یارن، سیاحت اور فارماسیوٹیکل کے شعبوں میں باہمی تجارت کے مواقع تلاش کیے جا سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ دوطرفہ تجارتی حجم میں تیزی سے اضافہ جاری ہے۔ امید ہے آنے والے دنوں میں بڑھتا ہوا رجحان جاری رہے گا، جو دونوں ممالک کی کاروباری برادریوں کے لیے بہت حوصلہ افزا ہوگا۔

ہائی کمشنر نے بنگلہ دیش کے پاکستان کے ساتھ فوڈ پروسیسنگ، ڈیری اور ٹیکسٹائل کے شعبوں میں تعاون کرنے کے ارادے کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی حیثیت تجارت کے لحاظ سے بنگلہ دیش کے لیے بہت فائدہ مند ہے۔

دونوں ممالک کو ایک دوسرے کی تکمیل اور تکمیل کرنا چاہئے۔ عرفان اقبال شیخ صدر ایف پی سی سی آئی نے بنگلہ دیشی ہائی کمشنر روح العالم صدیقی کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت کے بہت زیادہ امکانات ہیں اور ہمیں ایک دوسرے کے فائدے کے لئے اپنی صلاحیتوں اور صلاحیتوں کو بروئے کار لانا چاہئے۔

انہوں نے دوطرفہ تجارت کے دائرہ کار اور قدر میں تیزی سے اضافہ کے لئے مشترکہ تجارتی فروغ کی حکمت عملی کی تشکیل اور مؤثر نفاذ سمیت ٹیکسٹائل کی پیداوار اور خدمات میں مزید مشترکہ منصوبے کے حوالے سے تجاویز بھی دیں۔

ایف پی سی سی آئی کے سربراہ نے کہا کہ دونوں ممالک برآمدی تجارت کو فروغ دینے میں آسانی پیدا کر سکتے ہیں۔ اس سے بنگلہ دیش میں جوٹ، چائے اور تمباکو کی منڈی بڑھے گی، پاکستان دھاگے، چینی وغیرہ کی برآمدات میں بھی اضافہ کرے گا، تاہم موجودہ تجارتی توازن کو زیادہ سازگار بنانے کے لئے پالیسی سپورٹ کی ضرورت ہے۔

اس موقع پر مرزا عبدالرحمن چیئرمین کوآرڈینیشن ایف پی سی سی آئی نے کہا کہ سرمایہ کاری میں تعاون ایک اور شعبہ ہے جس میں دونوں ممالک باہمی فائدے کے لئے تعاون کر سکتے ہیں۔

انفارمیشن ٹیکنالوجی، ٹیلی کمیونیکیشن، کنسٹرکشن، آٹوموبائل پارٹس، فوڈ پروسیسنگ، فشریز، زراعت، ہوٹل انڈسٹری، اور رئیل اسٹیٹ تعاون کے زبردست مواقع اور امکانات پیش کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان بنگلہ دیش کے ساتھ تجارتی تعلقات بڑھا کر آگے بڑھنا چاہتا ہے۔ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی اور اقتصادی تعلقات کو بڑھانے کے وسیع مواقع موجود ہیں۔ پاکستان تجارت اور معیشت کو بڑھانے کا خواہاں ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

ملک کے بیشتر حصوں میں گرج چمک کے ساتھ بارش کا امکان ہے، محکمہ موسمیات

محکمہ موسمیات کے مطابق آئندہ 24 گھنٹوں کے دوران خیبرپختونخوا، بالائی پنجاب، بلوچستان، سندھ، کشمیر …

Show Buttons
Hide Buttons