پاکستان درست سمت میں جا رہا ہے، اپوزیشن کے روئیے ان کی شکست کی نشاندہی کر رہے ہیں، مراد سعید

پاکستان درست سمت میں جا رہا ہے، اپوزیشن کے روئیے ان کی شکست کی نشاندہی کر رہے ہیں، مراد سعید

وفاقی وزیر مواصلات و پوسٹل سروسز مراد سعید نے کہا ہے کہ فرزند زرداری کی غلیظ گفتگو پر افسوس ہے، شاید وہ بھول گئے کہ ان کی والدہ محترمہ اور نانی کے حوالے سے مخالفین نے اسی قسم کے پروپیگنڈے کا سہارا لیا تھا، بلاول کی گفتگو افسوسناک، شرمناک اور قابل مذمت ہے، پاکستان درست سمت میں جا رہا ہے، اپوزیشن کے روئیے ان کی شکست کی نشاندہی کر رہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے بلاول زرداری کی خاتون اول کے حوالے سے گفتگو پر اپنے ردعمل کے اظہار میں کیا۔ مراد سعید نے کہا کہ پرچی چیئرمین، فرزند زرداری شاید بھول گئے کہ ان کی والدہ اور نانی کے بارے میں ان کے سیاسی مخالفین نے ایسی ہی غلیظ گفتگو کا سہارا لیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ایک دیندار خاتون جو گھر میں رہ رہی ہے اور اس کا سیاست سے کوئی تعلق نہیں ان کے حوالے سے آپ کو یہ گفتگو زیب نہیں دیتی۔ انہوں نے کہا کہ آپ ایک پرچی کی بنیاد پر سیاست میں آئے اور اپنے والد کے نام سے پکارنے کو گالی سمجھتے ہیں، گھریلو خواتین کے بارے اس قسم کی گفتگو کرتے ہوئے آپ کو شرم آنی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ایک طرف آپ کی جماعت خود کو خواتین کے حقوق کی علمبردارکہتی ہےاور دوسری جانب آپ انتہائی گری ہوئی حرکت کرتے ہیں۔ مراد سعید نے کہا کہ بلاول کی بڑھکوں سےان کے چہرے پر بوکھلاہٹ عیاں تھی اور لگ رہا تھا کہ کانپیں ٹانگ رہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اپنی شکست دکھائی دے تو اس طرح کی باتوں اور حرکتوں پر اتر آتے ہیں۔ وزیراعظم نے کہا تھا کہ زرداری ہی پہلا نشانہ ہے کیونکہ آپ نے عوام کا خون چوسا ، پرچی لہرا کر سیاست میں آ کر آپ کہتے ہیں کہ میں چیئرمین ہوں۔

آپ کا سیاسی تجربہ کیا ہے، کبھی یونین کونسل یا ویلیج کونسل کا الیکشن بھی نہیں لڑا۔ انہوں نے کہا کہ آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کی انتخائی مہم میں دوتہائی اکثریت ہم نے حاصل کی، آپ کی جماعت کا تو نشان نہیں تھا۔

مراد سعید نے کہا کہ پرچی چیئرمین کو چیلنج ہے کہ پاکستان سے کسی بھی حلقہ کا انتخاب کریں اور میرے مقابلہ میں الیکشن لڑ کے دیکھ لیں آپ کو اپنی سیاسی ساکھ کا اندازہ ہو جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ میرے خیال میں تمیز اور سیاسی جدوجہد سکھانے کے لئے آپ کو کسی طلبہ تنظیم میں بھیجنا چاہیے تھا۔

انہوں نے کہا کہ پرچی لہرا کر اور کرپٹ زرداری کا بیٹا ہونے کا کہہ کر آپ ووٹ نہیں حاصل کر سکتے ۔وفاقی وزیر نے کہا کہ جب یہ لندن میں پاکستانی قوم کے پیسے سے تعلیم حاصل کر رہے تھے اس وقت 3نومبر کو ان کی والدہ بے نظیر بھٹو کا فون جاتا ہے اور وہ انہیں بتاتی ہیں کہ ان کے اکاونٹس اور پیسے کہاں کہاں پڑے ہیں اور اس کا ذکر ایک کتاب ” وے آف دی ورلڈ“ میں بھی موجود ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم آپ سے اسی پیسے کا حساب مانگ رہے ہیں۔ آپ اور آپ کے والد زرداری سے پوچھا جا رہا ہے کہ جعلی اکاونٹس میں پیسہ کہاں سے آیا، پاپڑ اور فالودے والے کے اکائونٹس میں پیسے کہاں سے آئے۔

انہوں نے کہا کہ جب آپ کو حکومت ملی تو آپ مسٹر ٹین پرسنٹ مشہور ہوئے۔ نیویارک ٹائمز نے اپنی 9جنوری 1998ءکی رپورٹ میں 2سو ملین ڈالر کے غبن اور دیگر سکینڈلز کا ذکر کیا۔ دیگر بین الاقوامی جرائد کی رپورٹس میں سوئس اکاونٹس، پولینڈ اور فرانس کی جائیدادوں کا ذکر ہے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ میں گوداموں سے گندم چوہے کھا جاتے ہیں، پنشن فنڈ اور سکولوں کے فرنیچر کے نام پر کرپشن ہوتی ہے، صحت کارڈ آپ نہیں دیتے، تھر میں بھوک سے بچوں کی اموات ہوتی ہے اور آپ سے سوال پوچھیں تو آپ جواب نہیں بلکہ گالیاں دیتے ہیں، اس کا آپ سے سوال ضرور ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ فیک اکاونٹس جے آئی ٹی کی رپورٹ میں اورئینٹ پاور اور اومنی گروپ کی کرپشن کا ذکر ہے۔ ٹھٹھہ اور سعدی شوگر ملز، پاور پلانٹس، زرعی ٹریکٹر سکیم کی کرپشن کی داستانیں بھری پڑی ہیں۔ قوم کے ان پیسوں کو واپس کر دیں یا جواب دیں۔ آپ کی کرپشن کی داستانیں پوری دنیا میں مشہور ہے، آپ کے صدقے کے بکروں اور کچن کے اخراجات بھی سرکاری خزانے پر ہوتے رہے۔

لندن میں بلاول کی تعلیم قومی پیسوں سے ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی قوم نے پہلے بھی آپ کو مسترد کیا اور آئندہ بھی شکست آپ کی مقدر ہو گی، آپ کو سنجیدہ نہیں لیتے لیکن جب غلیظ گفتگو کریں گے تو جواب دینا پڑے گا۔

مراد سعید نے کہاکہ وزیراعظم عمران خان نے اپنا چالیس سالہ ریکارڈ سپریم کورٹ میں پیش کیا جس پر انہیں صادق اور امین قرار دیا گیا ہے۔

عمران نے پہلا کینسر کا ہسپتال لاہور میں بنایا، نمل جیسی عالمی معیار کی یونیورسٹی قائم کی اور 22سالہ جدوجہد کے بعد مقبول ترین وزیراعظم بنے اور دنیا کے سامنے پاکستان کا مقدمہ پیش کیا۔ پاکستان اور اسلام کی ترجمانی کی، ڈرون حملے رکوائے اور خودداری پر مبنی خارجہ پالیسی متعارف کرائی۔ عمران خان خوددار قوم کا خوددار وزیراعظم ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

اوپیک پر کمزور ہوتی امریکی گرفت

اوپیک پر کمزور ہوتی امریکی گرفت

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons