تازہ ترین

برطانیہ کا شاہی ٹکسال بے کار ٹیلی فون سے سونا کیوں حاصل کرنا چاہتا ہے

اگر آپ جانتے ہوں کہ آپ کے کچن کی دراز کی پشت پر سونا یا چاندی بیکار پڑا ہے تو کیا آپ اسے نظرانداز کر دیں گے یا اسے دور پھینک دیں گے؟ یقیناً ایسا نہیں ہے، کیونکہ یہ دنیا کے سونے اور چاندی سے حاصل ہونیوالی بڑی رقم کے حوالے سے مستقبل میں اہم ہے۔

خوبصورت اور بیش قیمت ہونے کی وجہ سے ان دھاتوں کو صدیوں سے اہمیت دی جاتی رہی ہے اور اب ہمارے استعمال کی اکثر اشیاء میں ان کا استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ الیکٹرانک کے آلات چلانے میں فعال کردار ادا کر رہی ہیںلیکن ان آلات میں بہتری لانے کیلئے ہم پرانی چیزوں کو یا تو پھینک دیتے ہیں، ضائع کر دیتے ہیں یا انہیں نظرانداز کر دیتے ہیں۔

اب اس منافع بخش اور منفرد طریقے پر کام کرنے کیلئے مختلف کمپنیاں کام کر رہی ہیں جس میں سب سے بڑا نام برطانوی شاہی ٹکسال کا ہے جو الیکٹرونک فضلے کی کٹائی کیلئے کینیڈین کلین ٹیک اسٹارٹ اپ ایکسائر سے مل کر کام کر رہا ہے۔ برطانوی شاہی ٹکسال نے 11 سو سال قبل 886 عیسوی میں برطانوی سکے بنانے کا آغاز کیاتھا۔ اسی لئے قیمتی دھاتوں کے بارے میں وہ زیادہ ماہرانہ تجربات رکھتے ہیں۔

سین میلارڈ کو گزشتہ سال یہاں چیف گروتھ آفیسر تعینات کیا گیا تھا۔ وہ پرامید ہیں کہ وہ غیر استعمال شدہ بند پڑے اور بیکار آلات سے قیمتی دھاتیں دوبارہ حاصل کر لیں گے۔ میلارڈ کے مطابق الیکٹرانک آلات میں سونے اور چاندی کثیر مقدار میں پائے جاتے ہیں۔ یہ بچوں کے کھلونوں سے لیکر خطرناک جوہری ہتھیاروں کے درمیان ہر چیز میں پائے جاتے ہیں اور دنیا کا 7 فیصد سونا ضائع کئے گئے الیکٹرونک آلات میں پایا جاتا ہے۔

میلارڈ کے مطابق مثال کے طور پر ہم ہر سال تقریبا5 کروڑ ٹن یا 350 بحری جہازوں جتنا الیکٹرانک ضائع کرتے ہیں، جس میں سے اب تک صرف 18 فیصد ہی دوبارہ قابل استعمال بنایا جاتا ہے، جو ایک بڑا مسئلہ ہونے کے ساتھ ساتھ عام افراد اور کاروباری طبقے کیلئے اہم موقع ہے۔

میلارڈ کا کہنا ہے کہ یہ عام افراد کیلئے بھی اچھا موقع ہے  کیونکہ ایک عام گھرانہ سالانہ تقریبا 20 الیکٹرانک آلات ضائع کر دیتا ہے، جس میں سے اکثر موبائل فون ہوتے ہیں۔ آپ انہیں بے کار اشیاء خریدنے والوں کو بھیج سکتے ہیں جس کے بدلے وہ آپ کو موبائل فون کی قیمت ادا کر دیں گے۔

میلارڈ کی بحری جہاز کی دی گئی مثال تو ہر کوئی سمجھ نہیں سکتا۔ جب ان سے پوچھا گیا کہ ایک آئی فون میں کتنا سونا استعمال ہوتا ہے تو وہ جواب دینے سے قاصر رہے، کیونکہ عام طور پر ترقی پذیر ٹیکنالوجی کا معیار اور استعمال اتار چڑھاؤ کا شکار رہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آئی فون میں گزشتہ 15 سال، 10 سال، 5 سال اور 3 سال میں مختلف وزن کا سونا استعمال کیا گیا۔

حتی کہ ایک ہی کمپنی کے  ہر لیب ٹاپ میں اس کا پیمانہ مختلف ہے۔ میلارڈ کے مطابقیہی چیز اسے اہم بناتی ہے اور انہوں نے جو ٹیکنالوجی ایجاد کی ہے اس سے صرف اور صرف سونے کو تمام دھاتوں کے علیحدہ کرکے نکالا جا سکتا ہے۔

کشید کا پرانا طریقہ زیادہ مؤثر نہیں تھا، لیکن نئے نظام پر روشنی ڈالتے ہوئے میلارڈ نے سمجھاتے ہوئے بتایا کہ اگر آپ ایک بیکریا پرنٹٹڈ سرکٹ بورڈ کو چند سیکنڈ کیلئے ایک محلول میں ڈال کر نکال لیتے ہیں تو لفظی طور پر یہ سکینڈوں کا عمل ہے جس سے 99 فیصدمحلول اسے 9۔99 فیصد خالص بنا دیتا ہے۔

فضلے سے حاصل کی گئی خالص اشیاء اس کے بعد بہت اہمیت اختیار کر جاتی ہیں۔  لیکن بچ جانے والے فضلے کو بحری جہازوں کے ذریعے دوسرے ممالک بھیج دیا جاتا ہے جہاں وہ اسے جلا کر اس سے قیمتی دھاتیں اور ضرورت کے مطابق دیگر چیزیں بناتے ہیں۔

بدقسمتی سے کئی بار اسے زمین ہموار کرنے کیلئے بھی استعمال کیا جاتا ہے اور کئی بار اس سے ری سائیکلنگ کے ذریعے عام استعمال کی اشیاء تیار کی جاتی ہیں جو خطرناک ہو سکتی ہیں۔

یہی وہ عوامل ہیں جس کی وجہ سے ہم طریقہ کار میں تبدیلی لارہے ہیں۔ نئے طریقے سے کاربن ڈائی اکسائیڈ کے اخراج اور ہزاروں میلکے سفر کے بغیریہی عمل عام درجہ حرارت پر ہو رہا ہے۔

میلارڈ اور منٹ تمام طریقہ کار کو ایک مکمل سرکیولر معیشت بنانے اور نئے طریقوں کی تلاش پر کام کر رہے ہیں، تاکہ قیمتی دھاتوں کے حصول کے ساتھ ساتھ بچ جانے والے فضلے سے اشیاء بنانے اور استعمال کرنے والوں کو اس کے خطرات سے آگاہ کیا جا سکے۔

اگر مینوفیکچرر اپنی بنائی گئی اشیاء کی معیاد سے متعلق آگاہیکی مہم چلائیں تو یہ مہم خریدار کی توجہ اس جانب مبذول کروانے کیلئے اہم ثابت ہو سکتی ہے۔ اس سے وہ اپنے خراب ہونے والے موبائل فون کے قیمتی آلات کی دوبارہ قیمت حاصل کر سکتے ہیں اور وہ انہیں ہرگز نہیںپھینکیں گے اور نہ کوڑہ دان میں ڈالیں گے۔

یہ خبر پڑھیئے

راولپنڈی ٹیسٹ کا دوسرا روز، پاکستان نے 181 رنز بنالیے

راولپنڈی ٹیسٹ کا دوسرا روز، پاکستان نے 181 رنز بنالیے

راولپنڈی ٹیسٹ کے دوسرے روز انگلینڈ کی جانب سے پہلی اننگز میں 657 رنز کے …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons