تازہ ترین

دی بیلٹ اینڈ روڈ انیشئیٹو سے انٹرکنیکشن، تعاون اور مشترکہ مفادات کو فروغ دیا گیا ہے

عوامی جمہوریہ چین کے صدر شی جن پھنگ نے دو ہزار تیرہ میں دی بیلٹ اینڈ روڈ انیشئیٹو پیش کیا، سترہ نومبر دو ہزار سولہ کو اسےاقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی قرارداد میں شامل کیا گیا اور 193 رکن ممالک کے اتفاق رائے کا حصول ہوا۔

گیارہ ستمبر دو ہزار سترہ کو اقوام متحدہ کی 71ویں جنرل اسمبلی نے دی بیلٹ اینڈ روڈ انیشئیٹوکے “جامع مشاورت، تعمیری شراکت اور مشترکہ مفادات” کے اصول کو عالمی اقتصادی انتظام کے تصور میں شامل کیا۔
چین نے اس انیشئیٹو کے تحت تعاون کو مثبت طور پر فروغ دیا ہے اور اعدادوشمار سے ظاہر ہے کہ دوہزار تیرہ سے دو ہزار بیس تک چین کی دی بیلٹ اینڈ روڈ سے وابستہ ممالک کے ساتھ تجارت کی کل مالیت 92 کھرب امریکی ڈالر سے زائد تھی۔ دو ہزار اکیس کی پہلی ششماہی میں یہ مالیت 8 کھرب 26 ارب پچپن کروڑ ڈالرتک پہنچی۔  

اگست دو ہزار اکیس تک چین نے کل 172 عالمی تنظیموں یا ممالک کے ساتھ دی بیلٹ اینڈ روڈ سے متعلق دو سو سے زائددستاویزات پر دستخط کیے ہیں۔ آج دی بیلٹ اینڈ روڈ انیشئیٹو عالمی شہرت کی حامل بین الاقوامی عوامی مصنوعات اور دنیا میں تعاون کا سب سے بڑا پلیٹ فارم بن چکا ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

بیجنگ سرمائی اولمپک اور پیرالمپک سرمائی کھیلوں کے بعد کی ہیریٹیج رپورٹ اور کھیلوں کے بعد پائیداری ترقی کی رپورٹ جاری کردی گئی

4 فروری کو2022  بیجنگ سرمائی اولمپک اور پیرالمپک سرمائی کھیلوں کی پہلی سالگرہ ہوگی۔یکم تاریخ کو …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons