چین کی انسانی حقوق کے امور پر دوہرے معیار کی سختی سے مخالفت

تیرہ اکتوبر کو اقوام متحدہ میں چین کے نائب مستقل مندوب ڈائی بینگ نے جنرل اسمبلی کی تیسری کمیٹی کے اجلاس میں شرکت کی۔

انہوں نےانسانی حقوق سے متعلق ہائی کمشنر کےساتھ تبادلہ خیال کے موقع پر کہا کہ کووڈ-19 کی وبا بدستور سنگین ہورہی ہے۔ اس صورتحال میں “صحت کا بحران”، “ترقیاتی  گیپ” اور “ویکسین قوم پرستی” میں اضافہ انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے نئے چیلنجز لے کر آیا ہے۔ عالمی برادری کو اتحاد کو مضبوط بنانا چاہیے اور اس سے نمٹنے کے لیے مل کر کام کرنا چاہیے۔

ڈائی بینگ نے مزید کہا کہ چین انسانی حقوق کے امور کو سیاسی رنگ دینے، دوسرے ممالک کے اندرونی معاملات میں مداخلت کے لیے انسانی حقوق کے استعمال اور انسانی حقوق کے امور پر دوہرے معیار کی سختی سے مخالفت کرتا ہے۔

ڈائی بینگ نے اس بات پر زور دیا کہ امریکہ، برطانیہ، فرانس اور یورپی یونین نے رکن ممالک کی جانب سے اتحاد اور بات چیت کی خواہش کو نظرانداز کیا ہے، چین پر حملہ آور ہونے کے لیے جھوٹ گھڑے اور ایک مرتبہ پھر محاز آرائی کی راہ اپنائی ہے۔ چین اس کی سختی سے مخالفت کرتا ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی سے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کی الوداعی ملاقات

صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی سے چیف آف آرمی سٹاف جنرل قمر جاوید باجوہ نے …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons