تازہ ترین

عراق کی نئی حکومت کو مستقبل میں کئی چیلنجز کا سامنا ہے

دو ہزار تین میں امریکہ نے عراق پر حملہ کیا اور عراق کی اصل سیاسی ماحولیات کو تباہ کر دیا۔

کچھ تجزیہ کاروں نے نشاندہی کی کہ برسوں کی جنگ اور بیرونی قوتوں کی مداخلت سے عراق میں سیاسی جماعتوں کے درمیان نمایاں اختلافات موجود ہیں۔ عام انتخابات کے بعد نئی حکومت کو مستقبل میں متعدد چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑے گا اور عراق میں سیاسی صورتحال مستحکم ہوگی یا نہیں، ابھی اس کا اندازہ لگانا مشکل ہے۔

یاد رہے کہ دو ہزار تین میں امریکہ نے عالمی برادری کی عام مخالفت کے باوجود عراقی جنگ شروع کی۔ امریکہ کے حملے سے عراق کا اصل سیاسی ڈھانچہ تباہ ہو گیا ۔ اور ایک دوسرے سے مخالف بہت زیادہ  سیاسی جماعتیں وجود میں آئیں۔ عراق کی بڑی سیاسی جماعتوں کے درمیان بڑے اختلافات کی وجہ سے ، انتخابات کے بعد کابینہ کی تشکیل کے عمل میں پیچیدہ صورتحال رونما ہوگی ۔ مستقبل میں اگر نئی حکومت اصلاحات کو فروغ دینا چاہتی ہے تو اسے لامحالہ ملکی سیاسی تضادات اور بیرونی قوتوں کی مداخلت کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اگرچہ امریکہ کی بائیڈن انتظامیہ نے اعلان کیا ہے کہ عراق میں امریکی فوج اس سال کے اختتام سے قبل اپنے جنگی مشن ختم کر دے گی، اس کا مطلب یہ نہیں کہ مکمل امریکی انخلاء ہوگا۔ لہذا امریکہ اور ایران کے درمیان کھیل جاری رہے گا اور اس کا  عراق کی صورت حال پر اثر پڑے گا۔

یہ خبر پڑھیئے

چینی ادارے کی جانب سے پاکستان میں سیلاب زدگان کیلئے 30 لاکھ روپے مالیت کے امدادی سامان کی فراہمی

چینی ادارے کی جانب سے پاکستان میں سیلاب زدگان کیلئے 30 لاکھ روپے مالیت کے امدادی سامان کی فراہمی

چین کے سرکاری ادارے کی جانب سے سندھ کے سیلاب زدگان کیلئے 30 لاکھ روپے …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons