عالمی اداہ صحت نے کورونا وائرس کے دو نئے طریقہِ علاج کی منظوری دے دی

عالمی اداہ صحت نے کورونا وائرس کے دو نئے طریقہِ علاج کی منظوری دے دی

عالمی اداہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے کورونا وائرس کے دو نئے علاجوں کی منظوری دے دی ہے جس کے تحت مرض کی شدت اور زندگیوں کو بچانے کے لیے ویکسین کے ساتھ ساتھ کچھ آلات کا اضافہ بھی کیا گیا ہے۔

سعودی ذرائع ابلاغ کے مطابق ڈبلیو ایچ او نے یہ منظوری جمعے کو دی ہے اور یہ خبر ایسے وقت سامنے آئی ہے جب کورونا کے اومی کرون ویریئنٹ کے کیسز پوری دنیا میں بڑھ رہے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او نے پیش گوئی کی ہے کہ رواں سال مارچ تک یورپ کی نصف آبادی اومی کرون سے متاثر ہو سکتی ہے۔برٹش میڈیکل جرنل (بی ایم جے) میں اپنی تجاویز میں ڈبلیو ایچ او کے ماہرین نے کہا کہ جوڑوں کے درد کی دوائی باریسیٹینیب کا کورٹیکوسٹیرائیڈز کے ساتھ استعمال کورونا سے شدید متاثر مریضوں کے علاج کے لیے کیا جاتا ہے جس سے زندگیاں بچانے کی شرح بہتر اور وینٹی لیٹرز کی ضرورت میں کمی ہوتی ہے۔

ماہرین نے ان افراد کے لیے مصنوعی اینٹی باڈیز ٹریٹمنٹ سوتروویمیب کی بھی سفارش کی ہے، جو معمولی نوعیت کے وائرس کی وجہ سے ہسپتال میں داخل ہو سکتے ہیں جیسا کہ عمر رسیدہ اور قوت مدافعت کی کمی یا ذیابیطس جیسی دائمی بیماریوں میں مبتلا افراد شامل ہیں ۔

ماہرین کے مطابق ہسپتال میں داخل ہونے کے خطرے سے دوچار افراد کے لیے سوتروویمیب کے فوائد غیر معمولی ہیں ، تاہم ڈبلیو ایچ او نے کہا کہ کورونا وائرس کی نئی قسم اومی کرون کے خلاف اس کی تاثیرابھی تک غیریقینی ہے۔

یہ خبر پڑھیئے

ورلڈ اکنامک فورم سے چینی صدر کا خطاب، امید کا ایک اور پیغام

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons