چینی وزیر خارجہ کی افغان طالبان کی عبوری حکومت کے قائم مقام نائب وزیر اعظم سے ملاقات

پچیس اکتوبر کو چینی ریاستی کونسلر اور وزیر خارجہ وانگ ای نے اپنے قطر کے دورے کے دوران دوحہ میں افغان طالبان کی عبوری حکومت کے قائم مقام نائب وزیراعظم ملا عبدالغنی برادر سے ملاقات کی۔

وانگ ای نے کہا کہ افغانستان کو اس وقت انسانی بحران، معیشت، انسداد دہشت گردی اور نظم و نسق کے چار چیلنجز کا سامنا ہے، اسے عالمی برادری کی جانب سے مزید فراست اور حمایت کی ضرورت ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ افغان طالبان افغانستان میں تمام نسلی گروہوں اور جماعتوں کو متحد کرکے ایک جدید ملک کی تعمیر کریں گے جو لوگوں کی خواہشات اور وقت کےتقاضوں کے مطابق ہے۔

وانگ ای نے کہا کہ  چین افغانستان کے تمام عوام کے لیے ایک دوستانہ پالیسی پر عمل کرتا اور افغانستان کی تعمیر نو اور استحکام کے فروغ کے لئے مقامی حکومت کی کوششوں کی حمایت کرتا ہے۔ چین امریکہ اور مغرب سے متعلقہ پابندیاں اٹھانے کی اپیل کرتا ہے اور تمام فریقوں سے طالبان کے ساتھ عقلی اور عملی طور پر بات چیت کرنے کی اپیل  کرتا ہے تاکہ طالبان کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے میں مدد ملے۔

ادھر برادر نے اس بات پر زور دیا کہ وہ چین کے ساتھ مختلف شعبوں میں تعاون کو مضبوط بنانے کی امید رکھتے ہیں۔ افغان طالبان چین کے سیکورٹی خدشات کو بہت اہمیت دیتا ہے اور وہ اپنے وعدوں کو پوری طرح سے پورا کرے گا اور کبھی کسی کو یا کسی طاقت کو افغانستان کی سرزمین کو ایسے کام کرنے کی اجازت نہیں دے گا جس سے چین کو خطرہ ہو۔

یہ خبر پڑھیئے

امریکی کمپنیاں پاکستان کے مختلف شعبہ جات میں سرمایہ کاری کر کے بہترین منافع کما سکتی ہیں، وزیر خارجہ

وزیر خارجہ کا سلامتی کونسل کے صدر، اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کو خط

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے صدر اور اقوام …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons