روس کا "اوپن اسکائی ٹریٹی" سے دستبرداری کے فیصلے پر قائم رہنے کا فیصلہ

روس کا “اوپن اسکائی ٹریٹی” سے دستبرداری کے فیصلے پر قائم رہنے کا فیصلہ

بیس جولائی کو روسی نائب وزیر خارجہ لیبکوف نے کہا کہ “اوپن اسکائی ٹریٹی” سے دستبرداری کے روس کے فیصلے میں کوئی تبدیلی نہیں آئے گی۔

انہوں نے ریاستی پارٹی اجلاس میں کہا کہ دیگر ممالک کی طرح روس کو بھی اس معاہدے کی اتنی ضرورت نہیں ہے۔ اس سے قبل روسی وزارت خارجہ نے باضابطہ طور پر اعلان کیا تھا کہ رواں سال 18 دسمبر کو روس “اوپن اسکائی ٹریٹی” سے دستبردار ہوجائے گا۔

“اوپن اسکائی ٹریٹی” پر 1992 میں دستخط کیے گئے تھے اور 2002 میں اس پر عمل درآمد ہوا تھا۔ معاہدے کے فریقین ضرورت کے مطابق ایک دوسرے کے علاقوں پر غیر مسلح فضائی نگرانی کرسکتے ہیں۔ یہ معاہدہ سرد جنگ کے خاتمے کے بعد اعتماد سازی کا ایک اہم اقدام ہے جو شفافیت کے فروغ اور تنازعات کے خطرے کو کم کرنے میں مدد گار ہے۔ 

یہ خبر پڑھیئے

پاکستان کا عالمی برداری سے بھارت کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کا مطالبہ

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے یوم استحصال پر پیغام جاری کرتے ہوئے کہا کہ 5 …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons