سی پیک جیسے منصوبے سے نہ تو ہماری توجہ ہٹی ہے نہ ہٹے گی، ڈاکٹر بابر اعوان

سی پیک جیسے منصوبے سے نہ تو ہماری توجہ ہٹی ہے نہ ہٹے گی، ڈاکٹر بابر اعوان

وزیراعظم کے مشیر برائے پارلیمانی امور ڈاکٹر بابر اعوان نے کہا ہے کہ پاک چین اقتصادی راہداری جیسے منصوبے سے نہ تو ہماری توجہ ہٹی ہے اور نہ ہٹے گی، کسی کو اس بارے میں کوئی غلط فہمی نہیں ہونی چاہیے۔

بدھ کو قومی اسمبلی میں مسلم لیگ (ن) کے احسن اقبال کے نکتہ اعتراض پر اٹھائے گئے نکات کا جواب دیتے ہوئے ڈاکٹر بابر اعوان نے بدھ کی صبح چینی ورکرز کو لے کر جانے والی بس کو پیش آنے والے حادثہ کے حوالے سے کہا کہ یہ افسوس ناک ہے پاک چین اقتصادی راہداری جیسے منصوبے سے نہ تو ہماری توجہ ہٹی ہے اور نہ ہٹے گی۔ کسی کو اس بارے میں کوئی غلط فہمی نہیں ہونی چاہیے۔

ڈاکٹر بابر اعوان نے کہا کہ وہ وزیر داخلہ سے بات کریں گے کہ وہ اس بارے میں ایوان کو اعتماد میں لیں۔ انہوں نے کہا کہ جہاں تک پروٹوکول کے خاتمے سے متعلق امور کا تعلق ہے تو اس کے لئے خطرے کے تجزیہ کے قوانین موجود ہیں۔ اس پر نظرثانی بھی کی جاتی ہے۔ وزیراعظم نے کابینہ میں بھی اس حوالے سے واضح طور پر بات کی ہے کہ جن لوگوں کو خطرات ہیں ان کے بارے میں متعلقہ ضابطوں پر عمل کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ ایسے لوگ بھی موجود ہیں جن کے پاس بے تحاشہ سکیورٹی ہے، ان میں سابق سرکاری ملازم بھی شامل ہیں جن کے پاس بلٹ پروف گاڑیاں ہوتی ہیں۔ بعض سرکاری ملازمین ایسے ہوتے ہیں جن کے پاس سابق صدور اور سابق ججوں سے بھی زیادہ سکیورٹی ہوتی ہے۔ یہ ایک شوشہ ہے، اسے پروٹوکول تو کہا جاسکتا ہے لیکن سکیورٹی نہیں کہا جاسکتا۔ وزیراعظم نے ایسے لوگوں سے سکیورٹی واپس لینے کی ہدایت کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ قومی سلامتی اور خارجہ امور کے بارے میں ریاست اور حکومت کا موقف وہی ہے جو گزشتہ دنوں سکیورٹی بریفنگ میں واضح کیا گیا۔ ڈاکٹر بابر اعوان نے کہا کہ سب کو معلوم ہے کہ جب وزیراعظم سے انٹرویو میں سوال کیا گیا کہ کیا پاکستان اپنے اڈے دے گا تو وزیراعظم نے کہا کہ ہم امن میں تو شراکتدار ہو سکتے ہیں لیکن بحران میں قطعی طور پر شراکتدار نہیں ہو سکتے۔

یہ خبر پڑھیئے

پاکستان کا عالمی برداری سے بھارت کو کٹہرے میں کھڑا کرنے کا مطالبہ

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے یوم استحصال پر پیغام جاری کرتے ہوئے کہا کہ 5 …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons