تازہ ترین
blank

کوہ ہمالیہ کے شمالی دامن میں واقع لہاسہ شہر

لہاسہ چین کے تبت خوداختیار علاقے کا صدر مقام اور صوبہ چھنگ ہائی کے دارلحکومت شی نینگ کے بعد سطح مرتفع تبت کا دوسرا گنجان آباد شہر ہے۔ کوہ ہمالیہ کے شمالی دامن میں واقع لہاسہ کا مجموعی رقبہ 29 ہزار 52 مربع کلومیٹر ہے۔ یہاں سال بھر میں دھوپ نکلنے کا مجموعی دورانیہ 3 ہزار گھنٹوں سے زائد ہے، اسلئے اسے دھوپ کا شہر بھی کہا جاتا ہے۔ سطح مرتفع پر واقع ہونے کی وجہ سے لہاسہ کو موسم گرما میں سیر و سیاحت کے حوالے سے بہترین مقام قرار دیا جاتا ہے۔

لہاسہ کی سطح سمندر سے بلندی 3 ہزار 600 میٹر ہے، اسلئے یہاں آکسیجن کی مقدار میدانی علاقوں کے مقابلے میں 32 فیصد کم ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دیگر علاقوں سے آنیوالے سیاحوں کو یہاں عام طور پر سر درد اور کچھ دیگر جسمانی تکالیف بھی محسوس ہوتی ہیں، لیکن کچھ دیر آرام کرنے کے بعد یہ تکالیف ازخود دور ہو جاتی ہیں۔

تبت یونیورسٹی چین کے تبت خوداختیار علاقے کی مرکزی یونیورسٹی ہے۔ اس کا کیمپس شہر کے مرکز کی مشرقی جانب ضلع چھنگ کوان میں واقع ہے۔ اس یونیورسٹی کا سنگِ بنیاد 1952ء میں رکھا گیا تھا جس کے بعد 1985ء میں یہاںباضابطہ طور پر یونیورسٹی قائم کردی گئی تھی ، جس کیلئے مالی تعاون چین کی مرکزی حکومت کی جانب سے فراہم کیا گیا تھا۔  اس وقت تبت یونیورسٹی میں تقریبا 8 طلباء زیر تعلیم ہیں۔

لہاسہ میں ریل کا باقاعدہ نظام 2006ء میں متعارف کروایا گیا،جب اسے صوبہ چھنگ ہائی سے بذریعہ ریل منسلک کیا گیا۔ چھنگ ہائی سے تبت ریلوے کو سطح سمندر سے 5 ہزار میٹر سے زائد بلندی پر واقع ہونے کی وجہ سے  دنیا کی بلند ترین ریلوے لائن ہونے کا بھی اعزاز حاصل ہے، جو لہاسہ کو تقریباً 2 ہزار کلومیٹر کے فاصلے پر واقع صوبہ چھنگ ہائی کے صدر مقام شی نینگ سے منسلک کرتا ہے۔

تبتی زبان میں لہاسہ کا مطلب ہے دیوتاؤں کا مقدس مقام۔ لہاسہ کے مکین ایک شاندار ثقافت کے امین ہیں، جہاں منفرد رسوم و رواج، مندروں اور خانقاہوں کی بہتات، جنت نظیر دلکش قدرتی مناظر اور برف پوش سطح پرتفع سیاحوں کو اپنی جانب کھینچتے ہیں۔ لہاسہ شہر کے شمال مغرب میں واقع مارپوری پہاڑ پر 637 عیسوی میں تعمیر ہونیوالی عمارت کو 1645ء میں محل کی شکل دیدی گئی، جسے پوتالا محل کہا جاتا ہے۔ یہ محل بہترین انداز سے تعمیر کیا گیا ہے جسے دنیا کا سب سے بلند جگہ پر تعمیر کیا جانیوالا محل ہونے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔  اقوام متحدہ کے ذیلی ادارے یونیسکو کی 1994ء میں پوتالا محل کو عالمی ثقافتی ورثے کے فہرست میں شامل کیا گیا۔ اسکے علاوہ لہاسہ کے مشہور ترین آثار قدیمہ میں تاچاؤ یعنی جوکھانگ مندر، سیرا خانقاہ، نوربولنکا محل اور باکو جے نامی سڑک بھی شامل ہے

یہ بھی چیک کریں

blank

Guide to apply for Chinese Government Scholarship

Introduction to Chinese Government Scholarships In order to promote the mutual understanding, cooperation and exchanges …

اپنا تبصرہ بھیجیں

Show Buttons
Hide Buttons