ہواوے نے فائیو جی ایپلی کیشنز سے متعلق وائٹ پیپر جاری کر دیا

چین کی ٹیلی کمیونیکیشن کمپنی ہواوے نے فائیو جی ٹیکنالوجی کے میدان میں امکانات کے حوالے سے ایک حقائق نامہ جاری کیا ہے۔

ہواوے نے یہ وائٹ پیپر 10 ستمبر ہنگری کے دارلحکومت بوداپیسٹ میں بین الاقوامی ٹیلی مواصلات یونین (آئی ٹی یو) ٹیلی کام ورلڈ 2019 کے موقع پر ایک فورم کے دوران کیا۔ اس وائٹ پیپر کا عنوان ہے “فائیو جی ایپلی کیشنز پوزیشن پیپر”، جس میں براڈ بینڈ، میڈیا اور انٹرٹینمنٹ، صنعتی مینوفیکچرنگ اور انٹیلیجنٹ نقل و حمل کے شعبوں میں فائیو جی ٹیکنالوجی کے اطلاق اور اس کے استعمال کو وسعت دینے کے امکانات پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ اس وقت عالمی سطح پر، 20 ممالک میں 35 ٹیلی کمیونیکیشن آپریٹرز نے فائیو جی کنیکشن متعارف کروا دئیے ہیں۔ اس کے علاوہ ، 33 ممالک نے “فائیو جی اسپیکٹرم” کے لئے سلاٹ مختص کر لیے گئے ہیں۔

ہواوے نے پیش گوئی کی ہے کہ مستقبل میں فائیو جی ٹیکنالوجی کی مالیت کھربوں ڈالر پر مشتمل ہوگی اور اس شعبے میں سرمایہ کاری کے وسیع تر امکانات موجود ہیں۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق سن2035 تک ، فائیو جی ٹیکنالوجی کی عالمی سطح پر مالیت 12.3 ٹریلین امریکی ڈالر کے مساوی ہو گی، اور ٹیلی کام صنعت کی 80 فیصد آمدن فائیو جی سے منسلک ہوگی۔

گذشتہ دس برس کے دوران ہواوے نے فائیوجی کے میدان میں مجموعی طور پر چار بلین امریکی ڈالر کی سرمایہ کاری کی ہے ، یہی وجہ ہے ہواوے فائیو جی چپس ، مصنوعات اور نیٹ ورکس بنانے میں قائدانہ صلاحیتوں کا حامل ہے۔ واضح رہے کہ آئی ٹی یو ٹیلی کام ورلڈ 2019 ہنگری کے دارلحکومت بوداپیسٹ میں 9 ستمبر سے 12 ستمبر تک جاری رہے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں