ہانگ کانگ کے حوالے سے امریکی بیانات پر چین کا ردعمل

چینی وزارت خارجہ کی ترجمان کا ہانگ کانگ کے حوالے سے برطانیہ کے غلط عمل کا جواب

سولہ تاریخ کو چین کی وزارت خارجہ کی ترجمان ہوا چھون اینگ نے ہانگ کانگ کی صورت حال پر امریکی صدر کے تبصرے سے متعلق پوچھے گئے سوال کا جواب دیا۔صحافی نے پوچھا کہ اطلاع کے مطابق امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ اگر مظاہرین چین کے رہنما سے براہ راست ملاقات کر سکیں تو ہانگ کانگ کے مسئلےکو جلد حل کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ چین انسانی ہمدردی کے طریقے سے ہانگ کانگ کے مسئلے کو حل کرے گا۔امریکی صدر کے ان بیانات کے حوالے سے چین کا کیا تبصرہ ہے؟

چینی ترجمان ہوا چھون ا ینگ نے جواب دیتے ہوئے کہا کہ ہانگ کانگ میں پرتشدد کارروائیاں مسلسل طور پر شدید ہورہی ہیں۔ان پرتشدد کارروائیوں سے ہانگ کانگ کے استحکام اور خوشحالی کو نقصان پہنچا ہے اور وہ ایک ملک دو نظام کے اصول کی آخری حد سے تجاوز کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔اس وقت پرتشدد کارروائیوں کے خاتمے اور نظم و ضبط کی بحالی کو ترجیح دی جانی ہے۔انہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت قانون کے مطابق اقدامات اختیار کرنے میں چیف ایگزیگٹو کیری لام کی رہنمائی میں خصوصی انتظامی علاقے کی حکومت کی مثبت حمایت کرتی ہے، قانون کے نفاذ میں ہانگ کانگ پولیس کی حمایت کرتی ہے اور قانون کے مطابق پرتشدد جرائم میں ملوث افراد کو سزا دینے میں ہانگ کانگ خصوصی انتظامی علاقے کے متعلقہ اداروں کی حمایت کرتی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں