سنکیانگ کے ترجمان نے نام نہاد “خفیہ دستاویزات” پر بے بنیاد تشہیر کو مسترد کر دیا

سنکیانگ کے ترجمان نے نام نہاد "خفیہ دستاویزات" پر بے بنیاد تشہیر کو مسترد کر دیا

حال ہی میں کچھ غیر ملکی میڈیا یا تنظیموں نے سنکیانگ میں نام نہاد “خفیہ دستاویزات” کی بنیاد پر سنکیانگ کی انسداد دہشت گردی اور انسداد انتہاپسندی کے سلسلے میں حاصل کردہ کامیابیوں کو داغدار کرنے کی کوشش کی۔

اس حوالے سے چین کے سنکیانگ ویغور خوداختیار علاقے کے ترجمان کی جانب سے دیئے جانے والے بیان میں کہا گیا کہ، حقائق کو نظرانداز کرنے اور معاشرتی استحکام اور دیرپا امن و امان کے حصول کی خاطر سنکیانگ میں تمام قومیتوں کی کوششوں کو بدنام کرنے کی اس عمل کی مذمت کی جانی چاہیئے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ سنکیانگ میں پیشہ ورانہ مہارت کے تعلیمی و تربیتی مراکز میں انسانی آزادی سے محروم کیے جانے کا کوئی واقعہ نہیں ہوا اور مراکز کے تمام افراد کے حقوق و مفادات کا بھرپور قانونی تحفظ کیا جا رہا ہے۔ دو ہزار اٹھارہ سے اب تک نوے سے زائد ممالک یا علاقوں کی ایک ہزار سے زائد شخصیات نے ان مراکز کا دورہ کیا اور انہوں نے حقیقت کو اپنی آنکھوں سے دیکھ کر اپنی رائے کا اظہار کیا اور کہا کہ یہ مراکز دہشت گردی کے خلاف اور بنیادی انسانی حقوق کے تحفظ کے لیے اقوام متحدہ کے اصولوں سے مطابقت رکھتے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ حقائق سے یہ ثابت ہوا ہے کہ دہشت گردی پر لگائی گئی کاری ضرب نے ، سنکیانگ کے عوام کی سلامتی کی خواہش کو پورا کیا ہے، سماجی ہم آہنگی اور استحکام کا بھرپور تحفظ کیا ہے اور عوام کے خوشحالی، سیکورٹی اور حصول کے احساس میں نمایاں بہتری ہوئی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں