ایک پٹی ایک شاہراہ کو افغانستان اور وسطی ایشیائی ریاستوں تک وسعت دی جائے گی، چینی سفیر

ایک پٹی ایک شاہراہ کو افغانستان اور وسطی ایشیائی ریاستوں تک وسعت دی جائے گی، چینی سفیر

پاکستان میں تعینات چینی سفیر یاؤ چنگ نے کہا ہے کہ ایک پٹی ایک شاہراہ کو افغانستان اور وسطی ایشیائی ریاستوں تک وسعت دی جائے گی۔

پشاور یونیورسٹی کے ایریا سٹڈی سینٹر میں ایک پٹی ایک شاہراہ، سی پیک اور بین العلاقائی تبادلے کے عنوان سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ ہمارا خطہ ہے اور اس کے مسائل حل کرنا بھی اس خطے کے ممالک کی اپنی ذمہ داری ہے۔ یاؤ چنگ نے کہا کہ خیبرپختونخوا کے سنکیانگ، افغانستان اور وسطی ایشیائی ریاستوں کے ساتھ تاریخی تعلقات رہے ہیں، جنہیں ایک پٹی ایک شاہراہ کے تحت مزید بہتر بنایا جاسکتا ہے۔ چینی سفیر نے کہا کہ گزشتہ دنوں اسلام آباد میں منعقدہ سہ ملکی مذاکرات میں افغانستان کی صورتحال میں بہتری کے علاوہ علاقائی امن و استحکام اور ترقی کی ضرورت پر بھی زور دیا گیا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سی پیک سینٹر آف ایکسیلنس کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر نے کہا کہ سی پیک کے تحت گوادر ماسٹر پلان پر کام جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس منصوبے کیلئے 300 ارب ڈالر کی خطیر رقم مختص کی گئی ہے جس کے تحت پہلے مرحلے میں 2025ء تک گوادر کا بنیادی ڈھانچہ تشکیل دیا جائے گا، جبکہ دوسرے مرحلے میں 2035ء تک گوادر کی معاشی ترقی پر توجہ مرکوز رکھی جائے گی اور 2050ء تک گوادر ماسٹر پلان پر عملدرآمد کو مکمل کرلیا جائے گا۔ کانفرنس میں روس، قازقستان، کرغزستان، تاجکستان، ترکمانستان، ازبکستان، ایران، افغانستان اور سعودی عرب کے سفراء، حکومتی اداروں کے اعلیٰ عہدیداروں اور پشاور یونیورسٹی کی متعلقہ فیکلٹی کے ممبران کی بڑی تعداد بھی موجود تھی-

اپنا تبصرہ بھیجیں